روزوں کا فدیہ کتنا ہے اور کن لوگوں پر ہے؟ F10-32-02 - احکام ومسائل

تازہ ترین

Wednesday, May 6, 2020

روزوں کا فدیہ کتنا ہے اور کن لوگوں پر ہے؟ F10-32-02


روزوں کا فدیہ کتنا ہے اور کن لوگوں پر ہے؟!

O رمضان کے روزوں کا فدیہ کتنا ہے اور یہ کن لوگوں پر فرض ہے، براہ کرم تفصیل سے آگاہ فرمائیں؟؟
P اللہ تعالیٰ نے مسلمانوں پر رمضان کے روزے فرض قرار دئیے ہیں، جو حضرات معذور نہیں ہیں وہ ان روزوں کو بروقت ادا کریں اور جنہیں روزہ رکھنے سے کوئی عذر مانع ہے جیسا کہ مریض اور مسافر شخص ہے، ایسے افراد بعد میں قضا دیں۔ بشرطیکہ دوسرے دنوں میں قضا کی طاقت رکھتے ہوں، ایک تیسری قسم بھی ہے جو روزہ بروقت نہیں رکھ سکتے اور نہ ہی بعد میں قضا دے سکتے ہیں مثلاً بہت بوڑھا شخص یا ایسا مریض جس کے تندرست ہونے کی امید نہ ہو۔ ان کے حق میں اللہ تعالیٰ نے یہ تخفیف فرمائی ہے کہ وہ ہر روزے کے بدلے ایک مسکین کو کھانا کھلا دیں اور ارشاد باری تعالیٰ ہے: ’’اور جو لوگ روزہ کی طاقت نہیں رکھتے وہ بطور فدیہ ایک مسکین کو کھانا دیں۔‘‘ (البقرہ: ۱۸۴)
سیدنا حضرت ابن عباسw فرماتے ہیں کہ اس آیت کا حکم اس بوڑھے مرد اور بوڑھی عورت کے لئے ہے جو روزہ نبھانے کی طاقت نہیں رکھتے۔ (بخاری، التفسیر: ۴۵۰۵)
لیکن جس نے کسی عارضی عذر کی بناء پر روزہ چھوڑا، جب وہ عذر زائل ہو جائے تو رمضان کے بعد ان روزوں کی قضا ضروری ہے ایسے لوگ فدیہ نہیں بلکہ روزے رکھیں گے اور جن لوگوں نے دوسروں کو روزے رکھوانے ہیں وہ سحری اور افطاری دو وقت کا کھانا دیں یا اس پر اٹھنے والے اخراجات کے حساب سے انہیں پیسے دے دیں۔ (واللہ اعلم)


No comments:

Post a Comment

Pages