رخصتی سے قبل طلاق پھر رجوع F10-21-03 - احکام ومسائل

تازہ ترین

Saturday, February 22, 2020

رخصتی سے قبل طلاق پھر رجوع F10-21-03


رخصتی سے قبل طلاق پھر رجوع

O پچھلے سال ۲۰۰۹ فروری میں میرا نکاح ہوا، لیکن کچھ مجبوریوں کی وجہ سے رخصتی نہ ہو سکی جب کہ گھر سے باہر ہم میاں بیوی آپس میں ملتے رہے۔ ادھر با ضابطہ رخصتی سے قبل ہی میرے خاوند نے مجھے طلاق دے دی۔ اب میرے گھر والے کہتے ہیں کہ اس صورت میں عدت وغیرہ نہیں ہے، وہ آگے نکاح کرنا چاہتے ہیں جب کہ میرے خاوند نے طلاق کے بعد رجوع کر لیا ہے۔ اب مجھے کیا کرنا چاہیے‘ کتاب و سنت کی روشنی میں راہنمائی کریں؟
P رخصتی سے قبل اگر طلاق ہو جائے تو مطلقہ عورت پر کوئی عدت نہیں ہوتی بلکہ طلاق ملتے ہی نکاح ٹوٹ جاتا ہے اور اسے آگے نکاح کرنے کی اجازت ہے۔ ارشاد باری تعالیٰ ہے:
’’اے ایمان والو! جب تم اہل ایمان عورتوں سے نکاح کرو پھر ہاتھ لگانے سے پہلے ہی طلاق دے دو تو ان کے ذمے تمہارا کوئی حق عدت نہیں ہے جسے تم شمار کرو۔‘‘ (الاحزاب: ۴۹)
اس آیت کے پیش نظر سائلہ کے اہل خانہ کا موقف مبنی برحقیقت ہے لیکن انہیں علم نہیں ہے کہ ان کی صاحبزادی نے کچھ عجلت پسندی کا مظاہرہ کیا ہے اور وہ اس آیت کریمہ کی حدود سے تجاوز کر چکی ہے، صاحبزادی کیلئے اب یہی بہتر ہے کہ وہ اپنے والدین کو صورت حال سے آگاہ کر دے اور انہیں بتا دے کہ وہ اب غیر مدخولہ نہیں ہے کہ مذکورہ آیت کے ضابطہ کے تحت آئے، اب اس طلاق کا حکم درج ذیل آیت کے مطابق ہے:
’’طلاق والی عورتیں اپنے آپ کو تین حیض آنے تک روکے رکھیں‘ انہیں حلال نہیں کہ اللہ نے ان کے رحم میں جو پیدا کیا ہے وہ اسے چھپائیں اگر انہیں اللہ پر یقین اور یوم آخرت پر ایمان ہے‘ ان کے خاوند اس مدت میں انہیں لوٹا لینے کے پورے حقدار ہیں بشرطیکہ ان کا ارادہ اصلاح کا ہو۔‘‘ (البقرہ: ۲۲۸)
صورت مسئولہ میں خاوند کا حق رجوع صحیح ہے اور سائلہ بدستور اس کی بیوی ہے‘ اس صورت میں والدین آگے نکاح کرنے کے مجاز نہیں ہیں‘ سائلہ کو چاہیے کہ وہ اپنے والدین کو پوری صورت حال سے آگاہ کر دے اور کوئی چیز چھپا کر نہ رکھے، انہوں نے جو کچھ کیا ہے معاشرتی طور پر انتہائی قابل اعتراض ہے اگرچہ شرعی طور پر اس میں کوئی حرج نہیں ہے۔ (واللہ اعلم)

No comments:

Post a Comment

Pages